Thursday, September 27, 2012

غزل | ہمیں خیال فقط، سکوت شب کا تھا


کہہ  تو  دیتے ، مدعا  جو  لب  کا تھا
ہمیں  خیال  فقط، سکوت  شب  کا تھا
جب بھی سوال کیا ، بے مراد  ہی پلٹا
قصور شاید میرے دست  طلب کا تھا
بہت دیر سے آےَ،احسان وفا جتلانے
اس  کرم  کا  تو ، انتظار  کب کا  تھا
کیوں گلہ  کریں  اس کی کم نگاہی کا
زمانہ ازل سے ہی اپنے مطلب کا تھا
ابھی  جو نکھرا ہے قرطاس غزل  پر
دل  میں  نجانے  یہ غبار  کب کا  تھا
تمہی لاےَ ہو کفر و الحاد کے فتو ے
میں تو سیدھا  سا  بندہ ، رب  کا  تھا

                                                                                                                 ابرار قریشی  

No comments:

Post a Comment