Saturday, January 14, 2012

غزل | اسیری میں مر جانے دے ، قید سے اب آزاد نہ کر

اسیری  میں  مر  جانے  دے ، قید  سے  اب  آزاد  نہ  کر
تجھے   واسطہ  میری تباہی کا یہ ظلم میرے صیاد نہ کر
نہ   کر   توہینِ   محبت ، یوں  وفا  کی  گواہی  مانگ  کر
مجھے بھول چکی  ہے دنیا ، اب تو بھی مجھے یاد نہ کر
بات  تیری  انا   کی  تھی  ،  میں  تو  یوں  بھی  چپ  تھا
ہونا  تھا  جو ،  ہو بھی  چکا ، رو رو کہ اب فریاد نہ کر
کھیل  نصیبوں  کا  دیکھ  لیا ، میں نے تنہا رہنا سیکھ لیا
فقط  اپنی  محبت  کی  خاطر ، میری جستجو برباد نہ کر
تجھے چھوڑ جانے کی عادت ، مجھے تنہائیوں کا خوف
اس خالی کمرے کو اے دوست میرے پھر سے آباد نہ کر

No comments:

Post a Comment